Sale!

Infertility Powder (Hakim Sohail Wala

5,700.00 4,700.00

فوائد
منی کے امراض دور کر کے بچہ پیدا کرنے کے لائق بناتا ہے
سرعت انزال اورضعف باہ یعنی ڈھیلا پن کے امراض میں موثر
آقا محمدصلی اللہ علیہ وسلم نےفرمایا
جب دوا مرض کے مطابق مل جاتی ہے تو اللہ کے حکم سے شفا ہو جاتی ہے فقیر نے اس حدیث مبارکہ کی روشنی میں اپنے کئی سالوں کے تجربات کے بعد انفرٹئیلٹی پاوڈر حکیم سہیل والا دوا تیار کیا ہے جس کے ایک تا 3 ماہ کے اندر
Male Infertility بانجھ پن
Azoospermism سپرم کی کمی یا نہ ہونا
Pus cells in semen پس سیلز یا پیپ دار منی
Hydro Spermia امراض منی،رقت یا پتلی منی
Oligo Spermia قلت منی یا منی کی کم ہونا
Aspermia عدم انزال یا منی کم یا نہ ہونا
مردانہ امراض کے مسائل اللہ کی رحمت سے ٹھیک ہو جاتے ہے اور ٹھیک ہونے سے مردانہ بانجھ پن دور ہو جاتا ہے انشاءاللہ ان امراض کی تفصیلات نیچے درج کی گئی ہیں
الحمداللہ بہت سارے بانجھ پن کے مریضوں کی اللہ تعالی نے اس دوا انفرٹئیلٹی پاوڈر حکیم سہیل والا کے استعمال سے اولاد جیسی نعمت سے نوازا ہے یہ بات اس لئے کہہ رہا ہو تاکہ مردانہ بانجھ پن کے مریضوں کا یقین طب نبوی صلی اللہ علیہ والہ و اصحابہ و سلم پر مضبوط ہو

منی کا بیان اور منی میں خون کی آمیزش
منی بظاہر ایک سفید گاڑھا عرق کی مانند سیال ہے جس میں مخصوص بو پائی جاتی ہے اور آپ کو بتاتا چلوں کہ شاید اس سے پہلے آپ نے نہ پڑھ اور سنا ہو گا کہ ہر بندہ کے منی کی بو مختلف ہوتی ہیں ہر انزال پر منی کی مقدار مختلف مریضوں میں مختلف ملی لیڑ منی کا اخراج تندرستی کی علامت سمجھا جاتا ہے
منی کی تندرستی کی نشانی
خارج شدہ مادہ منویہ شیشے کی نالی کے اندر تھوڑی دیر کے لیے رکھے تو فالودہ کی طرح جم جائے گی
مادہ منویہ کی مکمل تفصیلات
منی کو کچھ دیر پڑا رہنے دیں تو پہلے جم جاتی ہے اور پھر خود بخود پگھل کر دو حصوں میں بٹ جاتی ہے
پہلا حصہ
یہ شفاف چھاچھ کی طرح سفید رنگ کا سیال ہوتا ہے یعنی منی کے اوپر رہتا ہے خوردبین سے دیکھنے پر عرق میں دانہ دار اجزاء دکھائی دیتے ہیں ان کو جدید طب دانہائے منویہ یعنی سیمینل گرے نیولز کہتے ہیں
دانہ دار اجزاء کے علاوہ دو قسم کی قلمیں ہوتی ہے
ایک مربہ شکل کی چھوٹی چھوٹی قلمیں جو منی کے اخراج کے فورا بعد دکھائی دیتی ہیں
دوسری قلمیں ان سے بڑی ہوتی ہیں جو منی کو سنبھال کر رکھنے پر تین یا چار دن بعد نظر آتی ہیں اور جدید طب ان کو باچر یا شرائز بولتی ہے کیمیاوی تجزیہ کی بات کرے تو ان میں نیوکلیوپروٹیڈ اور فاسفورس ملتا ہے
دوسرا حصہ
مادہ منویہ کا دوسرا حصہ کثیف اور غیر شفاف ہوتا ہے اور یہ منی کا نچلا حصہ ہوتا ہے
معائنہ کرنے پر اس میں ہزاروں کی تعداد میں سپرم (اجسام منویہ) تیرتے اور دمیں ہلاتے دکھائی دیتے ہیں دم کی حرکت افقی ہوتی ہے اور دم ہی کے ذریعے حرکت پذیر ہوتے ہوئے چلتے ہیں
سپرم کیا ہے
سپرم (حونیہ منویہ) میں ایک موٹاسر، پتلی گردن و لمبی دم دکھائی دیتی ہے سر سے دم تک کرم کی لمبائی 1/500 انچ ہوتی ہے سر نوکدار جس کے ذریعے عورت کے انڈے(بیضہ انثی) کے غلاف کے اندر گھس جاتا ہے ان اجسام منویہ کو جدید طب میں سپرم یا سپرمےٹوزوایا اور اردو میں حونیات منی کہتے ہیں استقرار حمل اور عمل تناسل کا نرینہ جزو ہے اور یہ بیضہ انثی و کرم منی کے باہم ملاپ کے بعد پذیرائی کی جانب بڑھتی ہے مباشرت میں اخراج کے وقت لاکھوں حونیات منویہ عورت کے اندام نہانی جاتے ہیں اور قدرتی طور ہر سپرم یعنی فردا” فردا بیضہ نسوانی میں تشفح پیدا کرنے کے قابل ہوتا ہے
حونیات منویہ اخراج کے بعد 48 گھنٹوں تک زندہ رہ سکتے ہیں
نوٹ
زیادہ سردی و ترش ماحول یعنی کونین، الکحل، پھٹکڑی و کروموسیلی میٹ کے اثر سے سپرم تلف ہو جاتے ہیں ترشی کے علاوہ سپرم کے اندر خون یا ریم ملی ہو تو بھی سپرم تلف ہو جاتے ہیں
سپرم کی کمی یا نہ ہونا یعنی Azoospermism
اس مرض میں مادہ منویہ تولیدی جرثوموں یعنی Sperm سےمحروم ھوتا ھے اور بعض مریضوں میں باوجود مادۂ کی موجودگی اور درست ایستادگی Erectile Dysfunction اور جماع واقع ھونے کے اولاد کا ھوناممکن نہیں ہوتا ہے
ہیمو سپرمیا (Haemo Spermia)
اس مرض میں انزال کے وقت منی کے ساتھ خون کا اخراج ہوتا ہے مگر اس کی جانچ بغیر لیب ٹیسٹ کے نہیں ہو سکتی ہے یہاں تک کہ مرض سالہا سالوں بگڑ کر ڈائریکٹ خون کا اخراج ہونے لگے دراصل اس کی وجہ فقیر کے تجربے کے بے تحاشا جلق لگانا ہے بار بار جلق لگانا سے جو گرمی رگوں میں بڑھتی ہے اس سے خصیتین اپنے فعل کو انجام نہیں دے پاتے یعنی خون کو منی کے صورت میں متحیل کرنا ہے
اس کی دوسری وجہ کثرت مباشرت بھی ہے اس میں زیادہ تر خون ملی منی کا انزال ہوتا ہے اس کی پہچان منی کی جانچ کرنے پر R. B. C اور اس کے ساتھ Puscell رپورٹ میں بڑھے ہونے گے اگر یہ مقدار میں زیادہ ہو تو منی کی مقدار کم اور سپرم نہ ہونگے اور ہونگے بھی تو ناں ہونے کے برابر
ریڈ بلڈ سیلز
R. B. C کا مطلب ہے خون کے لال ذرات یعنی Red Blood Cell
یہ ذرات خون میں پائے جاتے ہیں اور ایک صحت مند شخص کے فی معکب حجم ملی لیڑ یعنی per cubic mm میں 40 تا 45 لاکھ ہوتے ہیں
ان کے ذراتی اجزاء Cytoplasm میں ہیموگلوبن ہوتا ہے جس سے خون کا رنگ لال ہوتا ہے اور لوہا یعنی فولاد اس کا خاص جز ہے اور کام ان کا آکسیجن لے جانا ہے
مردوں میں Haemoglobin کا عام پیمانہ 14 تا 17 گرام فی 100 ملی لیٹر خون ہوتا ہے
نوٹ. عورتوں میں تناسب کم ہوتا ہے
پس سیلز یا پیپ دار منی یعنی Pus cells in semen
اس مرض میں کلینکل تجزیے میں منی میں پیپ شمولیت پائی جاتی ہے اور اس کی ری ایکشن یعنی ردعمل میں منی کی اکثر خصوصیات اپنا اثر کھو دیتی ہے جن میں کچھ خاص وجوہات یہ ہیں
بڑی وجہ بانجھ پن کو پیدا کرنا،اگر حمل ٹھہر جائے تو عورت کو بیمار کر کے اسقاط حمل یعنی اٹھہرا پیدا کرنا،اس کی وجہ سوزاکی مادہ کی موجودگی پس سیلز کے دوران پیدا ہو جانا،اگر علاج معالجہ سے کامیابی مل بھی جائے اور مکمل صحت نہ ہو اور حمل ٹھہر جائے تو بچے میں سوزاک کا امکان موجود رہنا،منی کا قدرتی رنگ پس سیلز زرد یا زردی مائل سبز میں تبدیل کر دیتے ہیں،مادہ منویہ کے رنگ بدلنے سے صفرا کا جسم میں بڑھنا،صفرا کے بڑھنے سے پیشاب کے امراض لاحق ہونا
اوعیہ منی کے بعض امراض بھی مریضوں میں دیکھے ہیں،مختصر ومفصل اس کا زہریلا اثر مجراے بول اور اوعیہ منی کے بعد امراض میں دیرپا تک رہتا ہے
امراض منی،رقت یعنی پتلی منی Hydro Spermia
قلت منی یعنی منی کی کم ہونا Oligo Spermia
عدم انزال یعنی منی کم یا نہ ہونا Aspermia
یہ تینوں امراض تقریبا ایک جیسے ہی جیسا کہ اوپر درج کر چکا ہوں ہائیڈرو سپرمیا میں منی پتلی انزال کے وقت خارج ہوتی ہے جبکہ اولیگو سپرمیا میں منی انزال کے وقت کم نکلتی ہے جس سے عضو مخصوصہ میں تناو یا اکڑاو ختم ہو جاتا ہے اور اسپرمیا میں انزال کے وقت منی خارج نہیں ہوتی ہے اور یہ انتہائی پیچیدہ اور لاعلاج امراض میں شامل ہے
نوٹ
مزیدرہنمائی کے لئے فون نمبر اینڈ واٹس ایپ پر رابط کریں
+923456752811
فقیر حکیم محمد سہیل نقشبندی
ماہر امراض جنسی و معدہ

Reviews

There are no reviews yet.

Be the first to review “Infertility Powder (Hakim Sohail Wala”

Your email address will not be published. Required fields are marked *